Dunia men khaar e gham bhi, shameem e wafa bhi hai by akhtar ansari ‎دنیا میں خار غم بھی شمیم وفا بھی ہے از اختر انصاری

دنیا میں خار غم بھی، شمیم وفا بھی ہے
ہے دلخراش بھی یہ چمن جانفزا بھی ہے

معیار پر طلب کے عطا کا ہے انحصار
ہے دل شکن بھی ان کی نظر دلربا بھی ہے

میں اس جہان تازہ سے گزرا ہوں بارہا
آگے مرے قدم سے مرا نقش پا بھی ہے

سو بار سر سے گزرا ہے موسم بہار کا
دیکھو کسی کا نخل تمنا ہرا بھی ہے

دل کا جو حال ہے وہ زباں پر نہیں تو کیا
سنیئے اگر تو ایک قیامت بپا بھی ہے

حسن نظر پہ اہل تمنا کو ہے غرور
گویا تمہارا جلوہ کوئی دیکھتا بھی ہے

اختر کو خبر ہے کہ کیا ہو مال کار
طوفاں بھی ہے سفینہ بھی ہے ناخدا بھی ہے

اختر انصاری

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s