ghunchon men thi na boo e gul o yaasmin men thi by shayar lakhnawi ‎غنچوں میں تھی نہ بوئے گل یاسمن میں تھی از شاعر لکھنوی

غنچوں میں تھی نہ بوئے گل و یاسمن میں تھی
وہ جسم کی مہک جو ترے پیرہن میں تھی

صحرا سمٹ کے پاؤں کی زنجیر بن گیا
ایسی بھی اک ادا مرے دیوانہ پن میں تھی

مخصوص فصل گل تھی تمہارے جمال سے
تم تھے جہاں، بہار وہیں تک چمن میں تھی

ہم سوچ میں تھے گردش دوراں کہاں گئی
پردہ اٹھا تو وہ بھی تری انجمن میں تھی

کیا کیا نہ زندگی کے الٹتی گئی ورق
وہ روشنی جو تیری جبیں کی شکن میں تھی

اس بات تک نہ شرح و بیاں بھی پہنچ سکے
جو بات ان کی اک نگہ کم سخن میں تھی

شاعر نہ منزلوں پہ بھی ہم کو ہوئی نصیب
وہ تازگی جو راہ وفا کی تھکن میں تھی

شاعر لکھنوی

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s