Sambhal hi len ge musalsal tabaah hon tu sahi by kishore naheed ‎سنبھل ہی لیں گے مسلسل تباہ ہوں تو سہی از کشور ناہید

سنبھل ہی لیں گے مسلسل تباہ ہوں تو سہی
عذاب زیست میں اشک گناہ ہوں تو سہی

کہیں تو ساحل نایافت کا نشاں ہوگا
جلا کے خود کو تقاضائے آہ ہوں تو سہی

مجال کیا کہ نہ منزل ہے نہ نشان وفا
سفیر خود نگراں گرد راہ ہوں تو سہی

صدا بدست بنے گی نہ یہ لہو کی تپش
لہو کے چھینٹے مگر گاہ گاہ ہوں تو سہی

ہے رات کھولے ہوئے بال دلفگار کہ اب
طلوع صبح کے آثار راہ ہوں تو سہی

خود اپنے عکس سے نالاں پھریں گے یہ خودبیں
فریب و مکر مجم پناہ ہوں تو سہی

یہ خودفریبئ احساس دلبری سے سراب
مقام حشر ہو باہم گواہ ہوں تو سہی

کشور ناہید

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s