Yeh marhale bhi muhabbat ke baab men aaye by murtaza burlas ‎یہ مرحلے بھی محبت کے باب میں آئے از مرتضی برلاس

ﯾﮧ ﻣﺮﺣﻠﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﮯ ﺑﺎﺏ
ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ
ﺧﻠﻮﺹ ﭼﺎﮨﺎ ﺗﻮ ﭘﺘﮭﺮ ﺟﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ
ﺁﺋﮯ

ﺧﻮﺷﺎ ﻭﮦ ﺷﻮﻕ ﮐﮯ ﺩﺭ ﺩﺭ ﻟﺌﮯ
ﭘﮭﺮﺍ ﻣﺠﮭ ﮐﻮ
ﺯﮨﮯ ﻧﺼﯿﺐ ﮐﮯ ﺗﻢ ﺍﻧﺘﺨﺎﺏ ﻣﯿﮟ
ﺁﺋﮯ

ﮨﺰﺍﺭ ﺿﺒﻂ ﮐﺮﻭﮞ ﻻﮐﮭ ﺩﻝ ﮐﻮ
ﺑﮩﻼﺅﮞ
ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺷﮑﻞ ﺟﻮ ﮨﺮ ﺭﻭﺯ ﺧﻮﺍﺏ
ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ

میں کیا کہوں کہ ترا ذکر غیر سے سن کر
جو وسوسے دل خانہ خراب میں آئے

وہیں قبلہء مردہ ضمیر لکھ دینا
ہمارا ذکر جہاں بھی کتاب میں آئے

ریا کے دور میں سچ بول تو رہے ہو مگر
یہ وصف ہی نہ کہیں احتساب میں آئے

ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﯾﺲ ﮐﯽ ﻣﭩﯽ ﺳﮯ
ﭘﯿﺎﺭ ﮐﺮﺗﺎ ﮬﻮﮞ
ﯾﮧ ﺟﺮﻡ ﺑﮭﯽ ﻣﯿﺮﯼ ﻓﺮﺩِ ﺣﺴﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﮯ

مرتضی برلاس

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s